• ☚ گیس بحران بڑھتے ہی ایل پی جی گیس ری فلنگ کا دھندہ چمک اٹھا
  • ☚ گجرات: ڈی ایس پیز کے دفاتر میں ویڈیو لنک کانفرنس روم قائم
  • ☚ گجرات:ایف آئی اے کو 10سال سے مطلوب 2 انسانی اسمگلرگرفتار
  • ☚ راجہ ارشد محمود جماعت اسلامی کی فری لیگل کمیٹی کے صدر مقرر
  • ☚ گجرا ت پریس کلب اور بار کابینہ کے اعزاز میں ظہرانہ
  • ☚ ایلیٹ سٹوڈنٹس فیڈریشن کے عہدیداران کا اجلاس‘ مختلف امور پر گفتگو
  • ☚ چوہدر ی بنگش خاں کی دعوت ولیمہ ‘ اہم شخصیات کے اکٹھ میں تبدیل
  • ☚ حاجی یوسف گل کا دورہ گجرات بار‘ نومنتخب کابینہ کیلئے نیک خواہشات
  • ☚ پنجاب گروپ آف کالجز کے زیر اہتمام طالبات کیلئے ایلیٹ ٹیسٹ
  • ☚ اقساط پرموٹر سائیکلیں فروخت کرنیوالوں نے وصولی کیلئے غنڈے پال لیے
  • ☚ عمران پانچ سال پورے نہیں کریں گے، اتنا دیوار سے نہ لگائو کہ عوام میرے ہاتھ میں نہ رہیں، آصف زرداری
  • ☚ گوشوارے جمع نہ کرنے پر،فواد چوہدری اور4وزراء سمیت332ارکان پارلیمنٹ کی رکنیت معطل
  • ☚ آپ لوگ کام نہیں کرسکتے، ملک سے محبت بھی کم ہوگئی، چیف جسٹس اسد عمر پر برہم
  • ☚ قرضے آرمی چیف کی وجہ سے ملے، عمران کا کمال نہیں، فوجی عدالتوں سے دہشت گردی ختم ہوئی، شہبازشریف
  • ☚ شریف فیملی سے ایک اور خاتون کی سیاسی انٹری
  • ☚ ’دوائی نہ دینے والی حکومت نوکریاں کیا دے گی‘
  • ☚ بزم غنیمت وشریف کنجاہی کی نئی تنظیم سازی کردی گی صدرسخی کنجاہی جنرل سیکرٹری ڈاکٹرمحمدعبدالمالک ہونگے
  • ☚ عوام مہنگائی کے سونامی میں ڈوب گئے،اسلام آباد پر چڑھائی کی توحکومتی تابوت میں آخری کیل ہوگی،بلاول بھٹو
  • ☚ ایف اے ٹی ایف نے پاکستانی موقف تسلیم کرلیا
  • ☚ علیمہ خان کی امریکی ریاست نیو جرسی میں بھی جائیداد نکل آئی
  • ☚ یورپ وا مریکہ میں شدید برف باری کا سلسلہ جاری
  • ☚ یوٹیوب نے متنازع ٹامی رابنسن کے اکائونٹ پر اشتہارات معطل کردیئے
  • ☚ برطانوی ڈرائیوروں کو نوڈیل بریگزٹ وارننگ دیدی گئی
  • ☚ 2افرادلوٹ مار کے دوران چاقو گھونپے جانے کے بعد اسپتال میں زیر علاج
  • ☚ یورپی یونین سے نکلنے کے متعلق نیا ریفرنڈم کرایا جائے،نکولا سٹرجن
  • ☚ برطانوی حکومت کو پارلیمنٹ میں شکست،یورپی یونین سے نکلنے کے متعلق نیا ریفرنڈم کرایا جائے،نکولا سٹرجن
  • ☚ تھریسامے اپنی حکومت بچانے میں کامیاب، تحریک عدم اعتماد 19ووٹوں سے ناکام
  • ☚ ویسٹ مڈلینڈز پولیس نے 16 ہزار600 پرتشدد جرائم ریکارڈ ہی نہیں کئے
  • ☚ مانچسٹر،ابوظہی جانے والی پرواز کے کیبن میں سموک پر ایمرجنسی لینڈنگ
  • ☚ بریگزٹ پر حکومت کی ڈیل نامنظور، 3 دن میں پلان B پیش کرنا ہوگا
  • ☚ پاکستانی اداکارہ ایمان علی بھی شادی کی تیاریوں میں مصروف
  • ☚ ملک کے ناموراداکارگلاب چانڈیو انتقال کرگئے
  • ☚ کراچی میں میوزیکل کنسرٹس کا دور واپس آگیا
  • ☚ انوشکا شرما کو تمباکو کے اشتہار میں کام کرنا مہنگا پڑگیا
  • ☚ فلم سے کیوں نکالا؟ تاپسی پنو پھٹ پڑیں
  • ☚ ایشین جونیئر اسکواش، پاکستان کی کامیابی
  • ☚ خواتین کرکٹ ٹیم کا تربیتی کیمپ شروع
  • ☚ کراچی میں کھیلنے کا تجربہ ناقابل یقین تھا، ڈومینی
  • ☚ میراتھن ریس کے روٹ کی منظوری
  • ☚ نئے ہاکی عالمی چیمپئن بیلجیم پر میچز فکس کرنے کا شبہ
  • آج کا اخبار

    برطانیہ میں 2016۔17 کے دوران تیزاب گردی کے 398 واقعات پیش آئے، شیڈومنسٹرافضل خان

    Published: 11-07-2018

    Cinque Terre

    مانچسٹر(غلام مصطفیٰ مغل) برطانیہ بھر میں 17۔2016 کے دوران تیزاب گردی کے 398 واقعات رونما ہوئے۔ واقعات میں 2012سے دوگنا اضافہ ہوا ہے۔ عام تاثر یہ ہے کہ پاکستان میں تیزاب گردی کے واقعات سب سے زیادہ رونما ہوتے ہیں اور شاید ہر دوسری خاتون تیزاب گردی کے باعث عدم تحفظ کا شکار ہے حالانکہ نتائج اس کے بالکل برعکس ہیں۔ پاکستان میں 2004سے 2017تک تیزاب گردی کے 513واقعات ہوئے۔ 2010میں پاکستان میں تیزاب گردی کے 65 واقعات رونما ہوئے جبکہ 2011 میں 49، 2013 میں پنجاب میں 10 جبکہ مجموعی طور پر 51 افراد تیزاب گردی کی بھینٹ چڑھے جبکہ 2014میں 61 واقعات رونما ہوئے۔ پاکستان میں ہر سال تقریباً 150 خواتین کو تیزاب گردی کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار ممتاز شخصیت سالیسٹر شعیب تاج کیانی کی جانب سے ناصر خان کے اعزاز میں عشیائیہ کے موقع پر شیڈو وزیر افضل خان نے کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پوری دنیا دہشت گردی سے محفوظ نہیں ہے ، ہمیں تمام اقوام کے ساتھ مل کر اس لعنت کو ختم کرنا ہے۔ اس موقع پر ڈپٹی لارڈمئیر مانچسٹر کونسلر عابد چوہان ، کونسلر باسط شیخ، کونسلرلطف الرحمٰن، کونسلر نعیم الحسن، کونسلر ڈاکٹر طارق چوچان، ہارون کھٹانہ، ڈاکڑ اجمل، سعید عبداللہ، پرویز عالم،جاوید اختر، نبیل جاوید، ناصر محمود ودیگر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ برطانیہ ایک ملٹی کلچر معاشرہ ہے جہاں مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے افرادآباد ہے۔ تقریب کے شرکا کا کہنا تھا کہ حیران کن بات یہ ہے کہ اس حوالے سے قانون سازی ہونے کے باوجود بھی ملزمان قانون کی گرفت سے آزاد گھوم رہے ہیں۔ اگر حکومتیں قانون سازی کے ساتھ ساتھ اس پر سختی سے عملدرآمد بھی کراتی تو تیزاب گردی کے واقعات میں نمایاں کمی آجاتی مگر حکومت خاموش اور معاشرہ بے حس ہو تو قانون صرف نام کا ہی رہ جاتا ہے۔حکومتوں کے ساتھ ساتھ معاشرے کے تمام طبقات کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ معاشرے میں برداشت اور مساوات کیلئے اپنا اہم کرداد ادا کریں۔ حکومت اور قانون نافذ کرنے والے ادارے پارلیمنٹ سے منظور کردہ قوانین پر سختی سے عمل کرائیں تاکہ جھوٹی انا کی تسکین کے لئے ہنستے مسکراتے انسان کو بھیانک روپ میں تبدیل کرنے والے عناصر کا قلع قمع کیا جا سکے۔