• ☚ چوہد ری اخلاق وڑائچ کا گرین گجرات مہم کے پائلٹ پراجیکٹ کا دورہ
  • ☚ اسد عمر کا مستعفی ہونا حکومتی نااہلی کا ثبوت ہے : عبد الغنی سندھو
  • ☚ چوہدری سلیم سرور جوڑا کا کڈنی سنٹر کا دورہ‘ پرتپاک خیر مقدم
  • ☚ میاں محمد ارشد بانٹھ کی وفات پر مختلف مکاتب فکر کا اظہار تعزیت
  • ☚ چوہدری طاہر مانڈہ کی کامیابی ن لیگ پر اعتماد کا اظہار ہے:جاویدبٹ
  • ☚ کنجاہ :سیٹھ فضل حسین کی اہلیہ کا ختم قل‘ ممتاز شخصیات کی شرکت
  • ☚ گجرات بار کے سابق صدر چوہد ری رخسار کے بھائی چوہدری افضال بیدری سے قتل
  • ☚ چوہدری برادران گجرات کی تعمیرو ترقی کے ضامن ہیں:نصر اللہ کھوکھر
  • ☚ کرپشن سے جڑ سے اکھاڑے بغیر ترقی ممکن نہیں: حسین عباس
  • ☚ اسمال اسٹیٹ ایریا کیساتھ سوتیلا پن بند کیا جائے:یاسر طارق بٹ
  • ☚ سری لنکا میں گرجا گھروں اور ہوٹل دھماکوں میں 207 افراد ہلاک، کرفیو نافذ
  • ☚ ایمنسٹی یا کریک ڈائون، کابینہ کے دوسرے اجلاس میں بھی اسکیم پر اختلافات برقرار، متعدد ارکان FBR سے ناراض، ذائع
  • ☚ ہیموفیلیا کے عالمی دن کے موقع پرخصوصی تقریب کا انعقاد
  • ☚ فیض آباد دھرنا کیس، فیصلے سے افواج پاکستان کے حوصلے پر منفی اثرات مرتب ہوئے، وزارت دفاع
  • ☚ گجرات میں 5 افراد سے منشیات اور اسلحہ برآمد کر کے مقدمات درج کر لیے گئے
  • ☚ عمران خان چند برسوں میں اثاثے کئی گنا ہوجانےکا حساب دیں، سلیمان شہباز
  • ☚ IMF سے معاہدہ اسی ماہ،معاملات طے پاگئے، 6 سے 8 ارب ڈالر قرض ملے گا، کچھ چیزیں مہنگی ہوں گی،عام آدمی متاثر نہیں ہوگا، وزیرخزانہ
  • ☚ پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان معاملات طے ‘ اربوں ڈالر کا پیکج ملے گا:کڑے معاشی بحران کا سامنا ہے: وزیر خزانہ
  • ☚ قیمتوں میں اضافہ، حکومت کا دواساز کمپنیوں کیخلاف کریک ڈائون
  • ☚ استعفیٰ دیا نہ کہیں جارہا ہوں، IMF سے اصولی اتفاق ہوگیا، اسدعمر
  • ☚ سکاٹش کرکٹ ٹیم کے نائب کپتان چل بسے
  • ☚ معدومیت کے خلاف بغاوت،پولیس مظاہرین کے خلاف حرکت میں آگئی
  • ☚ تھریسامے کی ایم پیز کو ہدایت دینے کی بجائے10کے ریس میں شرکت
  • ☚ کوونٹری میں تارکین وطن مخالف بریگزسٹ پارٹی کا اجلاس، مقامی آبادی کا شدید احتجاج
  • ☚ لندن: مظاہرین کا مظفرآباد میں ماحولیات کو تحفظ فراہم کرنے کا مطالبہ
  • ☚ ماحولیاتی آلودگی کیخلاف احتجاج جاری، مرکزی شاہراہیں بند، عوام کو شدید مشکلات، 300 مظاہرین گرفتار
  • ☚ انگلینڈ میں لینڈلارڈز پر کسی غلطی کے بغیر کرایہ دار سے مکان خالی کرانے پر پابندی
  • ☚ دو ایٹمی قوتوں کے درمیان مسئلہ کشمیر دنیا کے امن کیلئے خطرہ ہے، عبدالرشید ترابی
  • ☚ برطانیہ میں بین المذاہب کمیونٹیز آباد ہیں، سب کو اتحاد کا مظاہرہ کرنا ہوگا، افضل خان کیٹ گرین واجد خان
  • ☚ ہمارا نصب العین روشنی سب کیلئے، موتیا کے مفت آپریشنز کے ذریعے غریبوں کی دنیا روشن کرتے ہیں، عبدالرزاق ساجد
  • ☚ عائشہ عمر نے ٹی وی پر ایک بار پھر اداکاری کی ٹھان لی
  • ☚ سجل علی کی بہن اداکارہ صبورعلی نے خودکشی کی خبروں پر خاموشی توڑدی
  • ☚ لیجنڈ اداکار معین اختر کو مداحوں سے بچھڑے 8 برس بیت گئے
  • ☚ ہالی ووڈ فلم سیریز’ایونجرز‘ کے سپرہیروبڑے پردے پرانٹری کیلئے تیار
  • ☚ آصف رضا میر امریکی ٹی وی ڈرامے میں اداکاری کے جوہر دکھائیں گے
  • ☚ عرب امارات نے انڈر 19 کرکٹ ورلڈ کپ کیلئے کوالیفائی کر لیا
  • ☚ کسی کھلاڑی کو ٹرمپ کارڈ قرار نہیں دے سکتے،معین خان
  • ☚ میرا آخری ورلڈ کپ ہوگا، شعیب ملک، وسیم اکرم سے موازنہ درست نہیں، شاہین آفریدی
  • ☚ ایم ڈی مقرر کرنے کی منظوری نہیں لی،احسان مانی پر غلط بیانی کا الزام
  • ☚ گورننگ بورڈ کا اقدام چیئرمین پی سی بی کیخلاف اعلان عدم اعتماد،سیٹھی
  • آج کا اخبار

    عوامی مینڈیٹ کی تکمیل حکومت کی ذمہ داری، یورپی یونین سے برطانیہ کی علیحدگی کا عمل بروقت مکمل کرلوں گی، تھریسامے

    Published: 10-02-2019

    Cinque Terre

    لندن : برطانوی وزیراعظم تھریسا مے نے یورپی یونین کے رہنماؤں سے بات چیت کے بعد اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ یورپی یونین سے برطانیہ کی علیحدگی کا عمل بروقت مکمل کر لیں گی ۔ تھریسا مےکا کہنا ہے کہ وہ 29 مارچ کی ڈیڈ لائن سے قبل ترتیب وار علیحدگی کا عمل مکمل کر لیں گی تاہم یہ کوئی آسان کام نہیں ہو گا ۔ انھوں نے کہا کہ میں آئندہ دنوں میں اس مقصد کے لیے جاں فشانی سے مذاکرات کر رہی ہوں اور اس حوالے سے بالکل واضح ہوں کہ مجھے بریگزٹ کو عملی جامہ پہناناہے اور میں اس کو بروقت پایہ تکمیل تک پہنچانے جا رہی ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ 2016ء کے ریفرنڈم میں برطانوی عوام نے یورپی یونین سے علیحدگی کے حق میں فیصلہ دیا تھا اور عوام کی جانب سے دیئے گئے اس مینڈیٹ کو پورا کرنا میری حکومت اور دیگر سیاسی پارٹیز کی ذمہ داری ہے۔ انہوں نے کہا کہ یورپی یونین سے برطانیہ کی علیحدگی میں ملک اور عوام کے مفادات کو ترجیح دی جائے گی۔ تھریسا مے نے کہا کہ یورپی حکام کے ساتھ آئرشبارڈر پر بیک سٹاپ کے متبادل انتظامات کے سلسلے بات چیت جاری ہے اور میری کوشش ہے کہ میں انہیں اس میں تبدیلی پر آمادہ کر لوں گی۔ یورپی رہنمائوں سے مذاکرات مثبت رہے ہیں اور مزید بات چیت میں اچھے نتائج کیلئے پر امید ہوں ۔ واضح رہے کہ برطانوی پارلیمان نے وزیراعظم تھریسا مے کو یورپی یونین سے آئرلینڈ کے ساتھ سرحد کے انتظامات میں تبدیلی کے لیے ازسرنو مذاکرات کی ہدایت کی تھی جبکہ یورپی تنظیم نے ایک مرتبہ پھر برطانیہ سے طے شدہ بریگزٹ ڈیل پر کسی نئی بات چیت کے امکان کو مسترد کردیا اورکہا کہ اس ڈیل میں کوئی تبدیلی نہیں ہو سکتی تاہم انہوں نے اشارے دیئے ہیں کہ مستقبل کے تجارتی تعلقات کی ڈیل میں اس حوالے سے کچھ شامل کیا جا سکتا ہے۔ ادھر برسلزمیں یورپی رہنما ڈونلڈ ٹسک نے برطانوی وزیراعظم تھریسا مے سے کہا ہے کہ لیبر پارٹی کے لیڈر جیرمی کوربن کی جانب سے تازہ پیش کش بریگزٹ پرحالیہ ڈیڈ لاک کو ختم کرنے میں معاون ہو سکتی ہے۔ یورپی کونسل کے صدر ڈونلڈ ٹسک نے تھریسا مے پر زور دیا کہ وہ جیرمی کوربن کی جانب سے تعاون کی اس پیش کش کو قبول کریں اور ان کی مستقل کسٹمز انتظامات کی تجویز کو تسلیم کرتے ہوئے کامنز سے بریگزٹ ڈیل کو منظور کروائیں تاکہ بریگزٹ وقت پر ہو سکے۔ دوسری جانب کوربن کی جانب سے برطانوی وزیراعظم تھریسا مے کو لکھے گئے خط پر خود ان کی پارٹی کے ایم پیز نے شدید احتجاجی ردعمل کا اظہار کیا ہے اور بعض ایم پیز نے مستعفی ہونے کی دھمکی دی ہے۔ لیبر پارٹی کے اراکین کی اکثریت نے ریمین کی حمایت کی تھی اور لیبر لیڈر کی تازہ ترین پیش کش کے بعد ان ارکان کا کہنا ہے کہ کوربن نے ٹوری بریگزٹ کی مدد کی پیش کش کر کے پارٹی موقف سے انحراف کیا ہے۔ بہت سےارکان نے اس پر شدید غصے کا اظہار کیا کہ اس خط میں دوسرے ریفرنڈم کیلئے پارٹی کی فال بیک پالیسی کی وضاحت نہیں کی گئی۔ ڈائوننگ سٹریٹ کے اندرونی ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈونلڈ ٹسک کے ریمارکس پر تھریسا مے نے کہا کہ لیبر پارٹی کے ارکان کے غصے اور سخت ردعمل کی وجہ سے بریگزٹ ڈیل کی منظوری میں لیبر کےووٹ پر انحصار نہیں کیا جا سکتا ۔ ذرائع کا کہنا ہے کوربن کےاس خط کےبعد پارٹی میں شدید مباحثہ شروع ہو گیا ۔ کوربن نے تھریسا مے سے کہا ہے کہ برطانیہ کسٹمز یونین میں رکنیت برقرار رکھے تاکہ آئرش بارڈر بیک سٹاپ سے بچنے میں مدد مل سکے۔ کوربن کا کہنا ہے کہ اگر حکومت ریڈ لائنز کا خاتمہ کرتی ہے تو ہم پولیٹیکل ڈیکلیئریشن پر دوبارہ کام کر سکتے ہیں ۔کچھ ٹوری ایم پیز نے کراس پارٹی اتفاق رائے کیلئے جیرمی کوربن کی کوشش کو سراہا ہے۔ لیبر کے سابق لیڈرشپ امیدوار اوون سمتھ نے کہا کہ کوربن کے اس خط پر کئی ایم پیز مستعفی اور ارکان پارٹی چھوڑنے پر غور کر رہے ہیں۔لیبرایم پی چوکا اومونا نے کہاکہ یہ اپوزیشن نہیں بلکہ ڈیل کی فیسیلیٹیشن ہے جس سے عوام غریب تر ہو جائیں گے۔ برطانوی وزیراعظم سے مذاکرات میں یورپی یونین کے رہنمائوں نے واضح طور پر کہا ہے کہ طے شدے بریگزٹ ڈیل ری اوپن نہیں ہوگی۔ فریقین نے اس سے اتفاق کیا کہ فروری کے آخر میں مذاکرات کا ایک اور دور ہو گا۔ خیال کیا جاتا ہے کہ تھریسا مے کی ڈیل پر اب ووٹنگ مارچ کے اوائل میں ہو گی جبکہ برطانیہ کے یورپی یونین سے علیحدگی اختیار کرنے کی تاریخ 29 مارچ 2019 مقرر ہے۔ موجودہ حالات وزیراعظم تھریسا مے کیلئے بڑا چیلنج ہیں اور وہ ڈیل کو سب کیلئے قابل قبول بنانے کی غرض سے سیاسی قائدین سے بھی ملاقاتیں کررہی ہیں۔ تھریسامے کا کہنا ہے کہ بیک سٹاپ کے متبادل انتظامات کو ڈیل میں شامل کرانے کیلئے سرتوڑ کوششیں کر رہی ہیں گو یہ آسان کام نہیں ہے۔ بریگزٹ ڈے میں صرف 48 دن باقی ہیں۔ ڈونلڈ ٹسک کا کہنا ہے کہ بریگزٹ ڈیل میں بیک سٹاپ پر تعظل کا کوئی بریک تھرو دکھائی نہیں دیتا۔ تھریسا مے نے برسلزمیں انتہائی مصروف دن گزارا ۔ جرمن چانسلر انجیلا مرکل نے تھریسا مے کو یہ بیان دے کر حوصلہ دیا کو ڈیڈ لاک کا حل تلاش کیا جاسکتا ہے ۔ڈائوننگ سٹریٹ نے یورپی رہنمائوں سےوزیراعظم کے مذاکرات کو پراسس کا آغاز قرار دیا اورکہا کہ آنے والے دنوں میں مزید پیش رفت ہوگی۔ اب تھریسا مے آئرش رہنمائوں سے مذاکرات کیلئے ڈبلن اوربلفاسٹ جائیں گی اور ان کو یورپی رہنمائوں سے مذاکرات میں ہونے والی پیشرفت سے آگاہ کریں گی اور آئرش بارڈر کے حوالے سے ان کی تجاویز سنیں گی۔ ادھر ہیلتھ سیکریٹری سٹیفن ہیمنڈ نے انکشاف کیا ہے کہ وہ نو ڈیل کے خلاف ووٹ دینے کیلئے مستعفی ہو سکتے ہیں۔ بہت سے ٹوری فرنٹ بینچرز بھی ان کی تشویش کو شیئر کرتے ہیں۔