• ☚ معروف نعت خواں قاری غلام سرور نقشبندی کا صاحبزادہ ماکو کی پہاڑیوں میں سیکورٹی گارڈز کی فائرنگ سے جاں بحق
  • ☚ ون ڈش کی خلاف وزری پر جلالپورجٹاں کے میرج ہال میں چھاپے ،رنگ برنگے کھانے قبضہ کرلئے گئے
  • ☚ پالتوکتے کوچھریاں مارکرقتل کرنیکامعاملہ،واقعہ کاسخٹ نوٹس لے لیاگیا
  • ☚ ناروالی سنٹر میں پانچویں جماعت کا امتحان پر امن طریقہ سے ہو رہا ہے
  • ☚ ککرالی ہلاکت کیس ،DSPکھاریاں میاں محمد ارشد کومعطل کردیاگیا
  • ☚ علی بٹ اور فیصل بٹ کی سید مصطفی گیلانی کو ایس پی انویسٹی گیشن تعینات ہونے پر مبارکباد
  • ☚ جھیورنوالی سے 87پتنگیں برآمد ،کنجاہ پولیس کامیاب آپریشن
  • ☚ پنجاب پولیس نے اپنا ویب ٹی وی چینل بنانیکافیصلہ کرلیا،میگزین بھی شائع ہوگا
  • ☚ فاران انسٹی ٹیوٹ کی قابل قدرکاوشیں ہیں،طارق جاوید چوہدری کوخراج تحسین پیش کرتے ہیں:ڈاکٹراعجاز
  • ☚ ایس پی انویسٹی گیشن کے آتے ہی ایس پی ہیڈکوارٹر کاتبادلہ ،چارج چھوڑدیا
  • ☚ پی ٹی آئی کے پاس ہے کیا جو این آر او لیں، خواجہ آصف
  • ☚ قطرکی پاکستان کو ادھارLNGدینے سے معذرت، معاشی دباؤبڑھنے کاامکان
  • ☚ نیب نےن لیگ کے رہنما کامران مائیکل کو گرفتار کرلیا
  • ☚ ’’وزیر ِجھوٹ و خرافات نے جھوٹوں سے بھرپور پریس کانفرنس کی ‘‘
  • ☚ ’’وزیر ِجھوٹ و خرافات نے جھوٹوں سے بھرپور پریس کانفرنس کی ‘‘
  • ☚ عمران خان نے سہانے خواب دکھا کر عوام کو دھوکا دیا، احسن اقبال
  • ☚ ’’مڈٹرم الیکشن کی باتیں قیاس آرائیاں ہیں‘‘
  • ☚ سوات اور گردونواح میں زلزلے کے جھٹکے
  • ☚ اسلام آباد سمیت ملک کے مختلف شہروں میں زلزلے کے جھٹکے
  • ☚ 8 کروڑ افراد کیلئے مفت علاج، اسکیم کا آغاز، صحت کارڈ کے تحت غریب خاندان 7 لاکھ 20 ہزار روپے تک کا علاج حکومتی خرچے پر کراسکے گا، وزیراعظم
  • ☚ کشمیر میںانسانی حقوق کی خلاف ورزیاں روکنے کیلئے یورپی و برطانوی ارکان پارلیمنٹ کو کردار ادا کرنا ہوگا، امجد بشیر ایم ای پی
  • ☚ زلفی بخاری کا ’’اوورسیز پاکستانی سوشل کونسل ‘‘ کے قیام کا اعلان
  • ☚ بریگزٹ، تھریسامے ایم پیز سے ڈیل میں تبدیلی کیلئے مزید وقت مانگیں گی
  • ☚ حکومت نو ڈیل بریگزٹ کی صورت میں سڑکوں پر فسادات کی تیاری کررہی ہے، لارڈ باب
  • ☚ لیورپول سٹی سینٹر کے قریب فائرنگ سے 30سالہ شخص ہلاک
  • ☚ عوامی مینڈیٹ کی تکمیل حکومت کی ذمہ داری، یورپی یونین سے برطانیہ کی علیحدگی کا عمل بروقت مکمل کرلوں گی، تھریسامے
  • ☚ عوامی مینڈیٹ کی تکمیل حکومت کی ذمہ داری، یورپی یونین سے برطانیہ کی علیحدگی کا عمل بروقت مکمل کرلوں گی، تھریسامے
  • ☚ جرمن فوج میں مسلم آئمہ کی تقرری کیلئے مشاورت
  • ☚ حکومت پاکستان نے الطاف حسین کیخلاف مقدمات کی پیروی کے واجبات ادا کر دیئے
  • ☚ یورپی رہنمائوں کو بیک سٹاپ میں تبدیلی پر قائل کرلوں گی، تھریسامے، وزیراعظم برسلز پہنچ گئیں
  • ☚ کرن جوہرکی چہیتی کہنے پرکنگنا کوعالیہ کا کرارجواب
  • ☚ فلم کے سیٹ پررنبیر کو دیکھ کر عالیہ ڈائیلاگ کیوں بھول جاتی ہیں؟ اداکارہ کا اہم انکشاف
  • ☚ رنویر سنگھ نے راکھی ساونت کو دوسری ماں قرار دے دیا
  • ☚ ماضی میں سلمان خان کے سہارا دینے پرشاہ رخ خان آج بھی آبدیدہ
  • ☚ ماہرہ خان نے ایک اور بین الاقوامی اعزاز اپنے نام کرلیا
  • ☚ چیئرمین احسان مانی اور ایم ڈی وسیم خان آج دبئی روانہ ہونگے
  • ☚ پاکستان ویمن کرکٹ ٹیم نے تاریخ رقم کردی
  • ☚ آئی سی سی T20 رینکنگ، پاکستان کی پہلی پوزیشن برقرار
  • ☚ دبئی میں دوسرا ون ڈے پاکستان ویمن ٹیم نے جیت لیا
  • ☚ ثانیہ مرزا کی ٹینس کورٹ میں واپسی کی تیاری شروع
  • آج کا اخبار

    عزیز بھٹی شہید ہسپتال گجرات میں انتظامات میں بہتری کی ضرورت

    Published: 01-03-2018

    Cinque Terre

    حال ہی میں عزیز بھٹی شہید ہسپتال میں ایک افسوس ناک واقعہ میڈیا کاکی توجہ کامرکزبناہے جس میں ایک خاتوں نے ہسپتال کے عملہ کے غیرذمہ دارانہ رویے اور بے حسی کی وجہ سے ہسپتال کی حدود میں ہی بچے کوجنم دیاہے ۔ رپورٹ کے مطابق خاتون کوحالت زچگی میں ہسپتال لایاگیاتھا جس کو متعلقہ شعبہ نے داخل کرنے سے معذرت کرلی تھی اورمشیت الٰہی سے خاتون کے ہاں ہسپتال کے اندر ہیبچے کی پیدائش ہوگئی ۔ اس کے بعدمیڈیاکے ذریعے ڈاکٹروں کی غفلت جب خواص وعوام کے نوٹس میں آئی تو خادم اعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف نے بھی حسب معمول اس کانوٹس لیاپھر ہسپتال کی انتظامیہ کی کھینچاتانی بھی ہوئی اور متعلقہ خواتین ڈاکٹروں کی معطلیاں عمل آئیں ۔ انکوائری کمیٹی قائم کی گئی جس کی رپورٹ بھی آچکی ہے جس میں معطل شدہ تین خواتین ڈاکٹرز کی برطرفی کی سفارش کی گئی ہے ۔ انکوائری کمیٹی جس میں عزیز بھٹی شہید ہسپتال کے اے ایم ایس ڈاکٹر عابد ملک بطور کمیٹی کے سربراہ اور ان کے ساتھ سرجن ڈاکٹر زاہد مقصود، سنیئر ڈاکٹر اعزاز بشیر اور ڈپٹی نرسنگ سپرنٹنڈنٹ خنسہ اقبال شامل تھیں چوبیس گھنٹے میں انکوائری مکمل کر کے رپورٹ پیش کردی ہے ۔رپورٹ کے مطابق 16فروری کوجس دن یہ واقعہ پیش آیاگائنی وارڈ میں خواتین ڈاکٹرزمدیحہ اور ہماکی ڈیوٹی پر تھیں اور تیسری خاتون ڈاکٹر ڈیوٹی سے غیر حاضر تھیں۔ ڈیوٹی پر موجود دوڈاکٹرز میں سے ایک ڈیوٹی کاوقت ختم ہونے سے قبل ہی جاچکی تھیں ۔ عملہ کی طرف سے جب ڈاکٹر سے رابطہ کیاگیاتو انہوں نے ٹیلیفون پر کیس کو ریفر کرنے کی ہدایت کردی۔یہ واقعہ ہے جو اتفاق سے عام ہوگیااور اس سے ڈاکٹرز کی بے حسی، ہسپتال کے ناقص نظم و ضبط اور غریب پاکستانی شہری کی قدروقیمت اور حیثیت کاعکس سامنے آگیا مگر اس طرح کے واقعات عام ہوتے ہیں اور غریب لوگوں کے پاس صبر کے علاوہ کوئی چارہ نہیں ہوتا۔ایک مزدور عبدالرحمٰن ولد محمد شفیع فیکٹری میں کام کے دوران ا پنی انگلیزخمی کربیٹھا اسے ساتھی دن تقریباً بارہ بجے عزیز بھٹی شہید ہسپتال میں لے آئے ایمرجنسی میں اس کی انگلی پر پٹی باندھ کر اسے وارڈ میں بھیج دیاگیااور رات تین بجے اسے اپریشن تھیٹر لے جاکر اس کی انگلی کاٹ دی گئی جولواحقین کیلئے ایک غیر متوقع بات تھی ہسپتال کے عملہ نے جواز یہ پیش کیاکہ انگلی کالی ہوگئی تھی اور اسے کاٹنے کے سواکوئی چارہ نہ تھا۔ لواحقین یہ ماننے کیلئے تیار نہیں ہیں وہ کہتے ہیں کہ اگر بروقت علاج ہوتاتو ایسانہ کرناپڑتا۔اسی طرح بہت سے غریب مریضوں کو جنہیں فوری اپریشن کی ضرورت ہوتی ہے انہیں لمبی تاریخ دے دی جاتی ہے انہیں ٹیسٹ کرانے کیلئے بڑاانتظاکرناپڑتاہے اور اکثر باہر سے ٹیسٹ کرانے کاکہاجاتاہے۔
    صحت اور تعلیم انسانی معاشرے کی بنیادی ضرورتیں ہیں،مہذب اور ترقی یافتہ معاشروں اور فلاحی ریاستوں میں ان دو شعبوں کوبہت اہمیت حاصل ہوتی ہے چونکہ کسی ملک کی تعمیروترقی، دفاع اور شہریوں میں شعور بیدارکرنے اورمعاشرے سے غربت اور پسماندگی دور کرنے کیلئے صحت اورتعلیم کاکلیدی کردار ہوتاہے اور ان بنیادی سہولتوں کابہم پہنچانا ریاست کی اولین ذمہ داری خیال کی جاتی ہے ۔ مذکورہ بالاسہولتیں شہریو ں میں حب الوطنی پیداکرنے، جرائم کی روک تھام ، ملکی قوانین کااحترام اور ملک میں معاشی، معاشرتی وسیاسی استحکام لانے کیلئے ضروری ہیں اوران تک ہر کسی کی رسائی کوممکن بنانا بھی ضروری ہے ۔ ہمارے ہاں سرکاری ہسپتال آبادی کے تناسب سے ناکافی ہیں ان میں ضروت کے مطابق سہولتیں میسر نہیں ہیں اور ان میں مریضوں کااتنا رش ہوتاہے کہ بسااوقات علاج معالجے کی صحیح سروس عملہ کیلئے مہیاکرنا ناممکن بھی ہوتا ہے اور انتظامی مسائل بھی پیداہوتے ہیں ۔ اگرچہ ہمارے ہاں اب نہ ڈاکٹرز کی کمی ہے اور نہ ہی پیرمیڈیکل سٹاف کی لیکن ارباب اختیار کیلئے ایک انتظامی چیلنج ضرور ہے۔عزیز بھٹی شہید ہسپتال میں انجمن بہبود مریضاں کی بہت مدد حاصل ہے وہ غریب مریضوں کو دوائیاں بھی مفت فراہم کررہی ہے اور ہسپتال کی دوسری ضرورتیں بھی پوری کرتی ہے۔ لیکن مسائل پھر بھی ہیں ۔ اچھے ہسپتال اور سہولتیں بھی عوام کو مطمئن نہیں کر سکتیں جب تک کہ ڈاکٹرز اور دیگر سٹاف احساس ذمہ داری کے ساتھ کام نہ کرے۔ سرکاری شعبہ میں نئے ہسپتالوں کاقیام اور ہسپتالوں میں نظم و ضبط کو بہتر بنانے کی اشد ضرورت ہے۔ جرائم کی روک تھام کیلئے کئی طرح کے نئے محکمے وجود میں آچکے ہیں جن پر کروڑوں ، اربوں روپے خرچ آتاہے لیکن جرائم کے بنیادی اسباب پر کم ہی توجہ دی جاتی ہے۔ سرکاری شعبہ کے ہسپتالوں اور تعلیمی اداروں کی ناقص کارکردگی نے غریب عوام کو نجی شعبہ کامرہون منت کردیاہواہے جس کی سہولتوں سے عام طور پر محض خوشحال لوگ ہی استفادہ کر سکتے ہیں۔ارباب اختیار ہسپتال کے مسائل اور ڈاکٹروں میں احساس ذمہ داری پیداکرنے کیلئے اقدامات کریں تاکہ آئندہ کسی بچے کی پیدائش ہسپتال کی انتظارگاہ یاباہرپڑے بنچوں پر نہ ہو۔