• ☚ ماضی میں حکومتیں معاشی حب کراچی کو نظرانداز کرتی رہیں، وزیراعظم
  • ☚ اپوزیشن کے تیار ہوتے ہی حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد لے آئیں گے، بلاول
  • ☚ پی ڈی ایم کا پیپلز پارٹی اور اے این پی کے ساتھ مل کر بجٹ کی مخالفت کا فیصلہ
  • ☚ حکومت نے بجلی 1 روپے 72 پیسے فی یونٹ مہنگی کردی
  • ☚ 9 ماہ کے دوران بیرونی قرضوں میں 7 ارب41 کروڑ 30 لاکھ ڈالر سے زائد کا اضافہ
  • ☚ پاکستان نے پہلے ٹی ٹوئنٹی میں جنوبی افریقا کو شکست دیدی
  • ☚ حکومت نے ملک بھر میں جلسے جلوس پر پابندی عائد کردی
  • ☚ آئی ایم ایف کا بجلی، گیس اور یوٹیلیٹی اسٹورز پر سبسڈیز ختم کرنے کا مطالبہ
  • ☚ وزیراعظم نے گستاخانہ خاکوں کا معاملہ اقوام متحدہ میں اٹھادیا، اسلامو فوبیا کیخلاف یوم منانے کا مطالبہ
  • ☚ پیپلزپارٹی نے زیادتی کیس کے مجرم کو سرعام پھانسی دینے کی مخالفت کردی
  • ☚ حکومت کا ملک میں بھارت اور بنگلا دیش سے زیادہ مہنگائی کا اعتراف
  • ☚ وزیر خارجہ کا ڈی جی آئی ایس آئی کے ہمراہ کابل کا اہم دورہ
  • ☚ ’’پینڈورا پیپرز‘‘ سامنے آگئے، 700 پاکستانیوں کی آف شور کمپنیاں نکل آئیں
  • ☚ شمالی وزیرستان میں فورسز کی گاڑی پر حملہ، 5 اہل کار شہید
  • ☚ کورونا وبا؛ مزید 33 افراد جاں بحق، ایک ہزار سے زائد مثبت کیسز رپورٹ
  • ☚ افغانستان میں امن کیلیے عالمی برادری کی امداد ضروری ہے، آرمی چیف
  • ☚ طالبان نے افغانستان میں نئی حکومت کی تشکیل کا اعلان کردیا
  • ☚ سید علی گیلانی سری نگر میں سپرد خاک، بھارت نے وادی میں غیر اعلانیہ کرفیو لگادیا
  • ☚ 90 کی دہائی کی صورتحال سے بچنے کیلئے افغانستان کو تنہا نہ چھوڑا جائے، وزیرخارجہ
  • ☚ ادویات کی قیمتوں میں 150 فیصد تک اضافہ کردیا گیا
  • ☚ اسلام پسندی سے مغرب کو اب بھی خطرہ موجود ہے، سابق برطانوی وزیراعظم
  • ☚ افغانستان کے نئے وزیراعظم ملا حسن اخوند کی زندگی پر ایک نظر
  • ☚ ایران پر حملے کے پلان پر تیزی سے کام جاری ہے، اسرائیلی آرمی چیف
  • ☚ کرونا لاک ڈاؤن، بے گھر افراد کی مدد کے لیے اٹلی کے شہریوں کی زبردست کاوش
  • ☚ ایران میں کورونا وائرس سے خاتون رکنِ اسمبلی ہلاک
  • ☚ کورونا وائرس کے متاثرین 1لاکھ 8 ہزار ہوگئے، اٹلی میں 24 گھنٹوں کے دوران 133ہلاکتیں
  • ☚ دبئی کے حکمراں اہلیہ کو دھمکیاں دینے اور بیٹیوں کے اغوا کے مرتکب ہوئے، برطانوی عدالت
  • ☚ ترکی اور روس کا شام میں جنگ بندی پر اتفاق
  • ☚ تیونس میں امریکی سفارت خانے پر خود کش حملہ
  • ☚ کورونا وائرس؛ سعودی شہریوں کے عمرہ ادائیگی پر بھی پابندی
  • ☚ عالیہ بھٹ کی شوٹنگ کے دوران طبیعت خراب، اسپتال منتقل
  • ☚ عالیہ بھٹ کی شوٹنگ کے دوران طبیعت خراب، اسپتال منتقل
  • ☚ حریم شاہ کی لیک ویڈیو نے مفتی قوی کا اصل چہرہ بے نقاب کردیا
  • ☚ "ارطغرل غازی" کے اداکار کا طیارہ حادثے پر اظہار افسوس
  • ☚ کورونا وائرس؛ فنکاروں کی حکومت سے غریب طبقے کا خیال رکھنے کی درخواست
  • ☚ سری لنکا ٹیم حملے میں زخمی ہونے والے احسن رضا کا بطور ٹیسٹ امپائر ڈیبیو
  • ☚ محمد عامر کی قومی ٹیم میں واپسی کیلیے مشروط رضامندی
  • ☚ پی ایس ایل کا چھٹا ایڈیشن تماشائیوں کی موجودگی میں ہونے کا امکان
  • ☚ پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی نے پب جی گیم پر پابندی ختم کردی
  • ☚ روزانہ 22 گھنٹے گیم کھیلنے سے نوجوان کا بازو اور ہاتھ مفلوج
  • آج کا اخبار

    جماعت اسلامی ایک زندہ جاوید حقیقت

    Published: 01-03-2018

    Cinque Terre

    میں سیّدابولاعلیٰ مودودیؒ کے متعلق ان کی تحریروں کے ذریعے جتنا بھی واقف ہوں یہ کہنے میں تامل محسوس نہیں کرتا کہ دین اسلام کو مکمل ضابطہ حیات ثابت کرنااور زندگی کے تمام پہلوؤں یعنی سیاست، معاشرت اور معیشت وغیرہ کودین اسلام کے تابع کرنا ان کامطمع نظر رہاہے۔ ہندوستان کے مسلمانوں کی سیاسی جدوجہد کے بڑے بنیادی مسائل مثلاً ڈاکٹر محمد اقبالؒ کے نظریہ قومیت پرایک مستندمذہبی حلقے کی تنقید کاجواب ’’مسئلہ قومیت ‘‘ کے نام سے ایک کتابچہ لکھ کردیا، مولاناؒ کے ہم عصر اس بات کے گواہ ہیں کہ ہندوستان کے مسلمانوں کیلئے اسلام کی بنیادپر علیحدہ وطن کی مخالف مسلمانوں کی مذہبی و سیاسی تنظیموں کو مدلل جواب ماہنامہ ترجمان القرآن میں دیاجاتاتھا جس سے آل انڈیا مسلم لیگ کے کارکن نہ صرف خود استفادہ کرتے تھے بلکہ ترجمان القرآن کی کاپیاں آل انڈیامسلم لیگ کے جلسوں اور کارنر میٹنگز میں تقسیم کرتے تھے۔البتہ مولاناؒ کو نوزائیدہ علیحدہ اسلامی ملک کے قیام کے بعد نفاذ اسلام کے حوالے سے آل انڈیا مسلم لیگ میں شامل لوگوں کی اہلیت پر تحفظات تھے بالکل ایسے ہی جس طرح کہ عمران خاں کی جرأت، دیانت ، شہرت اور قائدانہ صلاحیتوں کے باوجود بعض لوگوں کو پی ٹی آئی کے بارے میں تحفظا ت ہو سکتے ہیں حالانکہ یہ ملک کی اس وقت پہلی یا دوسری بڑی پارٹی ہے۔ اس بناپر مولاناؒ کو قیام پاکستان کے مخالفوں میں شامل کرنا صریحاً بغض اور تعصب کا نتیجہ ہے چونکہ اگر وہ مخالف ہوتے تو اسلام کی بنیاد پر قائم ہونے والے ملک کے نظریہ کی مدلل وضاحت کیوں کرتے اور پٹھانکوٹ میں وسیع رقبہ پر محیط اپنے ادارہ دارالسلام کو چھوڑ کر لاہور کیوں منتقل ہوتے؟
    مولاناؒ چونکہ دین اسلام کو سرمایہ دارانہ نظام اورکمیونزم کے سامنے بطور نظام زندگی پیش کر رہے تھے اس لئے مغربی مفکرین اور کمیونسٹوں کی طرف سے ان کی مخالفت تو قدرتی بات تھی لیکن بدقسمتی یہ ہوئی کہ مقامی مذہبی حلقوں کی طرف سے ان کے خلاف سیاسی و مسلکی بنیادپر بہت زوردار، مؤثر اور غیرذمہ دارانہ پراپیگنڈا کیاگیا جس کے منفی اثرات جماعت اسلامی کی جدوجہد پرنمایاں طور پر پڑے ہیں البتہ ترقی پسندوں ، کمیو نسٹوں اورلادین طبقات کے پاس اسلام کی بطور نظام نفی کرنے کیلئے مضبوط دلائل نہیں ہیں اگرچہ وہ ابھی تک ہمت نہیں ہارے۔یقینی طور پر مولاناسیّد مودودیؒ کی علمائے دیوبند سے سیاسی فکر متصادم نہ ہوتی تو ان کی نظر میں مولاناؒ شاید بڑے مفکروں میں شامل ہوتے اسی طرح مولاناؒ دینی معاملات میں مصلحت پسند ی کاشکار ہوتے تو بریلوی طبقہ فکر میں بھی ان کا بڑامقام ہوتا۔
    جماعت اسلامی کے نصب العین ، اس کے کارکن کی تربیت اور استقامت کا ثمر ہے کہ یہ حق کا علم اٹھائے ہوئے ہے۔ جس کا ثبوت بنگلہ دیش میں تختہ دار پر اللہ اکبر کے نعرہ کے ساتھ چڑھ کر دیاجارہاہے ، مقبوضہ کشمیر میں ہندوستان کی فوجی بربریت کامقابلہ جماعت اسلامی کی استقامت کی بنیاد پر کیاجارہا ہے جس کا اعتراف دشمن کے فوجی افسران برملاکر رہے ہیں۔ ہندوستان میں بھی جماعت اسلامی ہی مسلمانوں کی ترجمانی کر رہی ہے باقی تو اپنے اپنے اسلام کی فکر کر رہے ہیں۔اب چونکہ جماعت اسلامی کی دعوت کاحلقہ وسیع ہو چکاہے جماعت کے کارکن کی مسلمہ اسلامی و جمہوری سوچ ، دیانتداری ، اصول پسندی اور مذہبی رواداری کے عام لوگ قائل بھی ہیں اور انہی اوصاف کے حامل افراد منتشر معاشرے کو صحیح سمت پر لاسکتیہیں چونکہ پوری قوم نے گذشتہ ستر سالوں میں ہر قسم کی سیاست کامزہ چکھ لیاہے سوائے جماعت اسلامی کے کسی بھی سیاسی جماعت کا ورکرموسمی ہے یعنی مستقل نہیں ہے اگر ہے تو اس کاذاتی مفاداتی ایجنڈا بھی ہے اور کوئی بڑا مقصدوفکراس کے پیش نظر نہیں ہے البتہ د ینی و سیاسی جماعتوں کا معاملہ مختلف ہے جو جماعت اسلامی کے نفاذ اسلام کے پروگرام کو عملی جامہ پہنانے میں رکاوٹ کاباعث بھی ہے زیادہ تر دینی و سیاسی جماعتیں مسلک کی بنیاد پرقائم ہیں اس سے قطع نظر کہ ان کاووٹ بنک کتناہے عموماً وہ کسی دینی جماعت سے اتحادیا جماعت اسلامی کو ووٹ دینے کی بجائے پریشر گروپ کے طورپر کسی سیکولرقوت کی حمایت کردینے کو ترجیح دیتی ہیں جو نفاذ اسلام کے حوالے سے عام پاکستانی مسلمان کیلئے بڑا تشویش ناک پہلو ہے چونکہ ملک و قوم کیلئے وہی سیاست مفید ہوگی جس سے ملک میں اتحادو یکجہتی اور فکری ہم آہنگی کوفروغ ملے گااسلامی نظریاتی ملک میں اسلام کی بنیاد پرسیاست کرناتوقیام پاکستان کا مقصد عظیم ہے لیکن مسلک کی بنیاد پر سیاست فرقہ پرستی کو فروغ دیتی ہے اور سیکولر قوتوں کاسیاسی تسلط آسانی سے قائم ہوجاتاہے ۔ پاکستان میں موجودہ صورت حال دینی قوتوں کی اسی سوچ کی عکاس ہے ۔ اس کے برعکس جماعت اسلامی قومی اور اسلامی سیاست کرتی ہے اس کے کسی رہنمایامقرر کے بیان میں مسلک کی بو نہیں آتیلہٰذا جماعت اسلامی کے ارباب اختیار کے کرنے کا ضروری اور فوری کام یہ ہے کہ جماعت اسلامی کے خلاف جھوٹے اور بے بنیاد پراپیگنڈا کوزائل کرنے کیلئے مؤثر اقدامات کئے جائیں اور اس کے پیغام اور جماعت اسلامی کی منفرد اور خصوصی حیثیت کو عام کیاجائے کہ دوسری جماعتوں کی طرح جماعت اسلامی کسی ایک فرد، خاندان، مسلک ، علاقہ یا صوبائی سطح کی جماعت نہیں ہے بلکہ یہ قومی اور ملی جماعت ہے اس میں ورکر کی اہمیت اور حیثیت ہے اور ملک و ملت کے اصلاح احوال کیلئے اس میں ہر کوئی شامل ہوسکتا ہے۔ جماعت میں کسی ورکر کے مقام کا تعین اس کی جماعت کے نصب العین سے وابستگی، خلوص ، رواداری اورصلا حیت و اہلیت سے کیا جاتا ہے نہ کہ دولت، شہرت اور سماجی و سیاسی حیثیت سے۔ اس لئے ذی شعور محب وطن ، اسلام پسند ، انصاف اور قانون کی بالادستی کے خواہاں ذی شعور پاکستانی جماعت اسلامی کے پلیٹ فارم پر جمع ہوں تاکہ ترقی کی راہ میں رکاوٹوں کو دورکیا جائے ، ملک کومضبوط کیا جائے اور اسلام کی بالادستی کیلئے منظم جدوجہد کی جائے۔