• ☚ ماضی میں حکومتیں معاشی حب کراچی کو نظرانداز کرتی رہیں، وزیراعظم
  • ☚ اپوزیشن کے تیار ہوتے ہی حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد لے آئیں گے، بلاول
  • ☚ پی ڈی ایم کا پیپلز پارٹی اور اے این پی کے ساتھ مل کر بجٹ کی مخالفت کا فیصلہ
  • ☚ حکومت نے بجلی 1 روپے 72 پیسے فی یونٹ مہنگی کردی
  • ☚ 9 ماہ کے دوران بیرونی قرضوں میں 7 ارب41 کروڑ 30 لاکھ ڈالر سے زائد کا اضافہ
  • ☚ پاکستان نے پہلے ٹی ٹوئنٹی میں جنوبی افریقا کو شکست دیدی
  • ☚ حکومت نے ملک بھر میں جلسے جلوس پر پابندی عائد کردی
  • ☚ آئی ایم ایف کا بجلی، گیس اور یوٹیلیٹی اسٹورز پر سبسڈیز ختم کرنے کا مطالبہ
  • ☚ وزیراعظم نے گستاخانہ خاکوں کا معاملہ اقوام متحدہ میں اٹھادیا، اسلامو فوبیا کیخلاف یوم منانے کا مطالبہ
  • ☚ پیپلزپارٹی نے زیادتی کیس کے مجرم کو سرعام پھانسی دینے کی مخالفت کردی
  • ☚ وزیر خارجہ کا ڈی جی آئی ایس آئی کے ہمراہ کابل کا اہم دورہ
  • ☚ ’’پینڈورا پیپرز‘‘ سامنے آگئے، 700 پاکستانیوں کی آف شور کمپنیاں نکل آئیں
  • ☚ شمالی وزیرستان میں فورسز کی گاڑی پر حملہ، 5 اہل کار شہید
  • ☚ کورونا وبا؛ مزید 33 افراد جاں بحق، ایک ہزار سے زائد مثبت کیسز رپورٹ
  • ☚ افغانستان میں امن کیلیے عالمی برادری کی امداد ضروری ہے، آرمی چیف
  • ☚ طالبان نے افغانستان میں نئی حکومت کی تشکیل کا اعلان کردیا
  • ☚ سید علی گیلانی سری نگر میں سپرد خاک، بھارت نے وادی میں غیر اعلانیہ کرفیو لگادیا
  • ☚ 90 کی دہائی کی صورتحال سے بچنے کیلئے افغانستان کو تنہا نہ چھوڑا جائے، وزیرخارجہ
  • ☚ ادویات کی قیمتوں میں 150 فیصد تک اضافہ کردیا گیا
  • ☚ اسرائیل کے ساتھ دوستانہ تعلقات قائم نہیں کریں گے:شہزادہ فیصل بن فرحان
  • ☚ اسلام پسندی سے مغرب کو اب بھی خطرہ موجود ہے، سابق برطانوی وزیراعظم
  • ☚ افغانستان کے نئے وزیراعظم ملا حسن اخوند کی زندگی پر ایک نظر
  • ☚ ایران پر حملے کے پلان پر تیزی سے کام جاری ہے، اسرائیلی آرمی چیف
  • ☚ کرونا لاک ڈاؤن، بے گھر افراد کی مدد کے لیے اٹلی کے شہریوں کی زبردست کاوش
  • ☚ ایران میں کورونا وائرس سے خاتون رکنِ اسمبلی ہلاک
  • ☚ کورونا وائرس کے متاثرین 1لاکھ 8 ہزار ہوگئے، اٹلی میں 24 گھنٹوں کے دوران 133ہلاکتیں
  • ☚ دبئی کے حکمراں اہلیہ کو دھمکیاں دینے اور بیٹیوں کے اغوا کے مرتکب ہوئے، برطانوی عدالت
  • ☚ ترکی اور روس کا شام میں جنگ بندی پر اتفاق
  • ☚ تیونس میں امریکی سفارت خانے پر خود کش حملہ
  • ☚ کورونا وائرس؛ سعودی شہریوں کے عمرہ ادائیگی پر بھی پابندی
  • ☚ عالیہ بھٹ کی شوٹنگ کے دوران طبیعت خراب، اسپتال منتقل
  • ☚ عالیہ بھٹ کی شوٹنگ کے دوران طبیعت خراب، اسپتال منتقل
  • ☚ حریم شاہ کی لیک ویڈیو نے مفتی قوی کا اصل چہرہ بے نقاب کردیا
  • ☚ "ارطغرل غازی" کے اداکار کا طیارہ حادثے پر اظہار افسوس
  • ☚ کورونا وائرس؛ فنکاروں کی حکومت سے غریب طبقے کا خیال رکھنے کی درخواست
  • ☚ سری لنکا ٹیم حملے میں زخمی ہونے والے احسن رضا کا بطور ٹیسٹ امپائر ڈیبیو
  • ☚ محمد عامر کی قومی ٹیم میں واپسی کیلیے مشروط رضامندی
  • ☚ پی ایس ایل کا چھٹا ایڈیشن تماشائیوں کی موجودگی میں ہونے کا امکان
  • ☚ پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی نے پب جی گیم پر پابندی ختم کردی
  • ☚ روزانہ 22 گھنٹے گیم کھیلنے سے نوجوان کا بازو اور ہاتھ مفلوج
  • آج کا اخبار

    اپنی ذمہ داریوں کو محسوس کر کے جیو

    Published: 01-03-2018

    Cinque Terre

    ابن فہیم ؒ سے منسوب ہے کہ وہ فرماتے ہیں کہ جس حیوان سے آدمی کو پیار ہو اس حیوان کی عادتیں غیر شعوری طور پر اس میں آجاتی ہیں اور جب اس کا گوشت کھاتے لگے تو حیوان کے ساتھ مشابہت میں اور اضافہ ہو جاتا ہے۔ عرب اونٹ کھانے کے شوقین ہوتے ہیں اس لئے ان کی طبیعت میں نحوت، میرث اور اکڑ پن کا عنصر زیادہ پایا جاتا ہے اس طرح انگریز سور کا گوشت پسند کرتے ہیں اس لئے ان میں فحاشی کا عنصر زیادہ پایا جاتا ہے ہمارے ہاں جب سے فارمی مرغی کھانے کا رواج آیا ہے تب سے ہم بحیثیت قوم چوں چوں شور شرابا تو بہت کرتے ہیں لیکن مقابلہ کرنے کی قوت ہم میں ختم ہو گئی ہمارے سامنے ایک سے ایک غلط کام ہوتا ہے ہم ٹس سے مس نہیں ہوتے ہمارے سیاستدان ہیں جی بھر کے لوٹتے ہیں ہمارے سامنے وہ اربوں ، کھربوں میں کھیلنے لگتے ہیں ان کی اولادیں غریبوں کو بھیڑ بکریاں سمجھتی ہیں وہ ہمارے خدا بن بیٹھتے ہیں ہم پھر بھیان کے آگے دم بھرتے رہتے ہیں ایک گلی، ایک سڑک یا بریانی کی ایک پلیٹ پر اپنی ووٹ کیط اقت کو نہ سمجھتے ہوئے دوبارہ اسی کرپٹ اشرافیہ کو ووٹ ڈال آتے ہیں اور پھر روتے بھی ہیں کہ ہمارے ملک کاب یڑہ غرق ہو گیا ہے جعلی پیر، عامل روز نئے جال کے ساتھ آتے ہیں ہم جانتے ہوئے ان کے چنگل میں پھنس جاتے ہیں میرا ایک دوست ایک بابے سے لاٹری کے نمبر پوچھتا تھا پاگل کو میں نے اتنا سمجھایا کہ اگر بابا نمبر جانتا ہوتا تو وہ اپنے لئے نکال لیتا پر اس کی سمجھ میں نہیں آیا۔ عامل لوگ ایک ایک شعبدہ بازی سے لاکھوں کماتے ہیں ان کے دعوے ایسے ہوتے ہیں کہ بندہ عقل سے سوچے تو کبھی یقین نہ کرے مگر لوگ ہزاروں لٹا دیتے ہیں ہمیں پتہ چل جائے کہ فلاں دکان دار فراڈیا ہے دھوکہ باز ہے ۔ ملاوٹ کرتا ہے ہم نے سو دوسو کی چیز خریدنی ہوتی ہے مگر ہم اس دکان دار کے پاس دوبارہ نہیں جاتے مگر سیاستان، جھوٹے عامل، جھوٹے پیر ہمیں پتہ ہونے کے باوجود لوٹتے رہتے ہیں مگر ہم فارمی مرغی کی طرح خود ذبح ہونے کے لئے تیار رہتے ہیں روز ہم نوجوان بیٹیوں کے جنازے اٹھا رہے ہیں ایک دو دن روکر تھوڑا سا شور ڈال کر چپ کر جاتے ہیں معاشرہ تو ویسے ہی سرنڈر کر گیا ہے کہ میرے تو اپنے ہی سیاپے ختم نہیں ہو رہے۔ میں پرائی آگ میں کیوں چھلانگ لگاؤں ہم پر تو فارمی مرغی کا اتنا اثر ہو گیا ہے کہ روز ٹریفک حادثات ون ویلنگ کی وجہ سے ہمارے پیارے ہم سے جدا ہو رہے ہیں پر ہم نہ تو اس کا کوئی حل تلاش کررہے ہیں اور تو اور ہم اپنی اولاد کو بھی نہیں روک رہے جو ہماری آنکھوں کے سامنے موٹر سائیکل گھر لے کر آتا ہے جو ون ویلنگ یا ریس کے لئے تیار کی گئی ہوتی ہے کیا ہمیں نظر نہیں آرہا ہوتا یا ہم فارمی مرغی کی طرح اتنی سستی اتنی کاہلی،ا تنی بزدلی آگئی ہوئی ہے کہ ہم اپنے بچوں کو بھی کنٹرول نہیں کر پا رہے۔ خدا کے لئے بحیثیت معاشرہ کے فرد کے بحیثیت گھر کے سربراہ کے اپنی ذمہ داریاں پوری کریں۔ پوری قوت سے پورے وسائل کے ساتھ جہالت کے خلاف آواز اٹھائیں یہ گیم نہیں خود کشی ہے۔ میری نوجوان نسل سے بھی گزارش ہے کہ دنیامیں سب سے بھاری چیز ایک بوڑھے باپ کے لئے نوجوان بیٹے کا جنازہ ہوتا ہے باپ کو یہ بوجھ نہ اٹھوائیں۔ ماؤں، بہنوں کو آپ سے بڑی امیدیں ہیں ان کی امیدوں کو نہ توڑیں رب کریم سے دعا ہے کہ وہ سب کی حفاظت فرمائے۔ ہمارے حق میں خیر والے فیصلے فرمائے۔ لوگوں کے لئے امید بنیں خوش رکھیں۔ خوش رہیں۔